مان جاؤ ناں

مان جاؤ ناں
یہ مانا کہ ترے اک بھی اشارے کے بنا
کچھ بھی نہیں ممکن
کوئی تجسیم نہیں ہوگی
کوئی تکمیل نہیں ہوگی
کوئی بھی کُن تری طاقت سے زیادہ ہو نہیں سکتا
یہ سورج چاند اور تارے
تری بس کُن کے باعث ہی نکلتے ہیں
طلوع ہو کر سفر اپنا مکمل کرکے جاتے ہیں
یہاں ہر ایک تنکے کو تراہی بس سہارا ہے
کہیں نمرود سے فرعون سے شداد سے بندے
کہیں سرکش بھگوڑےہیں
بڑے ہی ناتواں نکلے
بڑے دعوے دھرے ہی رہ گئے سب کے
مگر مولا تری رحمت سمندر ہے
تری عظمت بلندی ہے
تری الفت عبادت ہے
تری راحت تری چاہت
محبت کے سوا کچھ بھی نہیں آقا
مرے مولا مری یہ بات سُن لے
اور ہمیں بس معاف کردے
تراتخلیق کردہ یہ جہاں
تصویر کرنا ہے
ابھی تو رنگ بھرنے ہیں
ابھی تیری تجلی سے اندھیرے دور کرنے ہیں
تجھے پانا تو باقی ہے
ہمیں اپنی پناہ دے دے
ہمیں اپنی پناہ دے دے
ثمینہ گُل

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے