Kya Tha Tark E Mohabbat

کیا تھا ترکِ محبت کا تجربہ میں نے

اور اب یہ سوچ رہا ہوں یہ کیا کیا میں نے

اب اپنے آپ کو آواز دیتا پھرتا ہوں

کہ جیسے تجھ کو نہیں خود کو کھو دیا میں نے

یہ دکھ بھی کم تو نہیں ہے کہ نیم سوز چراغ

جلا نہیں تھا کہ اس کو بجھا دیا میں نے

یہ زہر خون کے ہمراہ رقص کرتا ہے

بہت چکھا ہے محبت کا ذائقہ میں نے

بدل رہے تھے بہت اس میں خال و خد میرے

سو خود ہی توڑ دیا اپنا آئینہ میں نے

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے