Krun Shikwa To Be Wiswaas

کروں شکوہ تو بے وسواس میں اُس سے نہ آنے کا
نہ ہو دھڑکا مرے دل میں گر اُس کے روٹھ جانے کا

وساطت سے کسی کی چھپ کے بھی چاہا نہ کچھ ورنہ
کیا تھا ڈھب تو یاروں نے بہت اُس سے ملانے کا

ترے پہلو سے اُٹھ جانے کا جتنا ہے الم ہم کو
نہیں اتنا تو غم اپنے تئیں دل کے بھی جانے کا

مجھے آتا ہے رونا دیکھ کر زانو کو اب اپنے
کہ تھا اک وقت میں تکیہ کسی کے یہ سرہانے کا

رقیبِ رو سیہ کی بات پر مت گوش رکھیو تو
کیا ہے فکر اِس نے میرے اور تیرے لڑانے کا

(ق)
حسنؔ تو ہر کسی سے حالِ دل کہتا پھرے ہے کیوں
عبث بدنام ہو گا اور نہیں کچھ اِس میں پانے کا

ملامت ہی کریں گے اور اُلٹی تجھ کو ہنس ہنس کر
کوئی احوال پر تیرے نہیں افسوس کھانے کا

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے