کوہسار یونیورسٹی

کہیں کوہ پیمائی دانش کے باب انا میں لکھا ہے
کہ ہموار رستوں پہ چلنا۔۔۔۔۔ بھلا کوئی چلنا ہے۔۔۔۔۔۔!!؟
اس سے تو بہتر ہے
بیٹھے رہیں
یا دھڑکتی عمارت کی بل دار اور گونجتی سیڑھیاں چڑھتے جائیں
کہ بے فیض راہوں پہ چلنا تو قدموں کی بے حرمتی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پہاڑوں کے راہی
کہ سب کوہساری عقیدے پہ ایمان رکھتے ہیں،
کہتے ہیں
رستے اتالیق ہیں۔
ہر قدم اک سبق
ہر دھمک اک رمق
اور ہر چاپ میں منطق الطیر کی وادیاں گونجتی ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کٹیلی چڑھائی کی اترن، چڑھائی ہے
اترائی ہرگز نہیں ہے۔
سو بالا بلندوں کی لغزش بہت عارضی ہے
اسے درگزر کیجئے صاحبا ۔۔۔۔۔۔!!!
کٹیلی ڈھلانوں کی گمراہ کن اور فریبی چڑھائی،
چڑھائی نہیں ہے۔
ڈھلانیں ثریا کی آنکھوں سے تحت الثری دیکھتی ہیں۔
اسی واسطے
پھن کی رفعت میں پھنکارتی دل ربائی ہے۔
کنڈل مگر کسمساتا ہے،
پاتال میں جھانکتا ہے۔
حذر کیجئے
اور فرومایہ کی دل فریبی سے صرف نظر کیجئے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ پہاڑوں کے بیٹے
بہت علم والے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ زندیق ہیں۔
اور کیسے نہ ہوں،
راستے ظالموں کے اتالیق ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وحید احمد

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔