خدا کا شکر، سہارے بغیر بیت گئی​

خدا کا شکر، سہارے بغیر بیت گئی​
ہماری عمر تمھارے بغیر بیت گئی​

ہوئی نہ شمع فروزاں کوئی اندھیرے میں​
شبِ فراق ستارے بغیر بیت گئی​

وہ زندگی جو گزارے نہیں گزرتی تھی​
تیرے طفیل گزارے بغیر بیت گئی​

شعور، تیز رہی زندگی کی دوڑ اتنی​
کہ ہار جیت شمارے بغیر بیت گئی​

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے