ﺧﻮﺍﮨﺶ ﻭ ﺧﻮﺍﺏ ﮐﺎ ﻣﻠﺒﮧ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ

ﺧﻮﺍﮨﺶ ﻭ ﺧﻮﺍﺏ ﮐﺎ ﻣﻠﺒﮧ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ
ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﯾﮑﺠﺎﻥ ﮨﻮﮞ ﺑﮑﮭﺮﺍ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ
ﺗﯿﺮے ﻗﺎﻣﺖ ﮐﺎ ﺍﮔﺮ ﻧﺼﻒ ﮨﮯ ﻗﺎﻣﺖ ﻣﯿﺮا
ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﺑﻮﺟﮫ ﺳﮯ ﺩﮬﺮﺍ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ
تو نے کیا سوچ کے چھو کر نہیں دیکھا مجھ کو
میں تری آنکھ کا دھوکہ بھی تو ہو سکتا ہوں
ﺑﮯ ﻧﺘﯿﺠﮧ ﮨﮯ ﺍﮔﺮ ﭨﮭﯿﮏ ﺳﮯ ﺟﮍﻧﺎ ﻣﯿﺮﺍ
ﻣﯿﮟ ﮐﮩﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺳﮯ ﭨﻮﭨﺎ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ
ﺍﮎ ﻧﻈﺮ ﺩﯾﮑﮫ ﺗﻮ ﻟﮯ ﺧﻮﺍﺏ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﺁﮐﺮ
ﻣﯿﮟ ﺗﺮﮮ ﺧﻮﺍﺏ ﮐﮯ ﺟﯿﺴﺎ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ
ﯾﮧ ﺟﻮ ﻣﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺳﺒﮭﯽ ﻟﻔﻆ ﻭ ﻣﻌﻨﯽ ﺍﭘﻨﮯ
ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﻭﺳﺮﺍ ﺗﺠﮫ ﺳﺎ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ
ﯾﮧ ﺟﻮ ﺭﻭﻧﮯ ﭘﮧ ﺑﻀﺪ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﯿﮟ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﻣﯿﺮﯼ
ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﺑﺮ ﮐﺎ ﭨﮑﮍﺍ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ
ﻣﻮﺕ ﺗﮭﮏ ﮨﺎﺭ ﮐﮯ ﻭﺍﭘﺲ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ
ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﺑﯿﻤﺎﺭ ﮨﻮﮞ ﺍﭼﮭﺎ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ
ڈاکٹر کبیر اطہر

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے