فروری 5, 2023
wali ullah wali
غزل بقلم محمد ولی اللّٰہ ولی ، نئی دہلی

خواب مجھ کو نہ دکھایا جائے
عَہدِ تعبیر بھی لایا جائے

آنکھیں ابَ دل میں اُتر جاتی ہیں
کیسے زخموں کو چھُپایا جائے

جن سے ملتا ہے محبت کا سبق
اُن کتابوں کو پڑھایا جائے

جو لہو سے ہوں ہمارے روشن
اُن چَراغوں کو جلایا جائے

کھیت میں چاندنی بوئی جائے
ہر طرف چاند اُگایا جائے

اُن سے کیا آنکھ چرائی جائے
جن سے دامن نہ بچایا جائے

آئینہ خانے ہیں خاموش ولیؔ
کسی وحشی کو بلایا جائے

ولی اللہ ولی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے