Khatam Shab Qissa Mukhtasir

ختم شب قصہ مختصر نہ ہوئی

شمع گُل ہو گئی سحر نہ ہوئی

روئی شبنم جلا جو گھر میرا

پھول کی کم ہنسی مگر نہ ہوئی

حشر میں بھی وہ کیا ملیں گے ہمیں

جب ملاقات عمر بھر نہ ہوئی

آئینہ دیکھ کے یہ کیجیئے شکر

آپ کو آپ کی نظر نہ ہوئی

سب تھے محفل میں ان کی محوِ جمال

ایک کو ایک کی خبر نہ ہوئی

سینکڑوں رات کے کئی وعدے

اُن کی رات آج تک قمر نہ ہوئی

قمر جلال آبادی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے