کشتی نقش وہ چھوڑ گئی

کشتی نقش وہ چھوڑ گئی
رُخ دریا کا موڑ گئی
کیسی آواز آئی تھی
کیا سناٹا چھوڑ گئی
دل کی ایک کرن باقیؔ
سب آئنے توڑ گئی
باقی صدیقی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے