کہانی محبت کی تم بھول جاتے

کہانی محبت کی تم بھول جاتے
اگر داغ سینے کے ہم بھی دکھاتے

ستم گر تمھارا بھی کیا حال ہوتا
تقاضے محبت کے گر تم نبھاتے

جوکوٸی پیارا تمھیں چھوڑ جاتا
نہ جیتے نہ مرتے نہ تم چیں پاتے

جومجھ سےبچھڑنا تھی خواہش تمھاری
بچھڑ تم نہ سکتےاگرمل کے جاتے

زمانےپہ تم نے تو سب کچھ لُٹایا
بڑی بات تھی گر محبت لُٹاتے

مناتے رہے ہم سدا اُن کو عاجز
بڑا خوب تھا جو خدا کو مناتے

ڈاکٹرالیاس عاجز

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے