کبھی سنی ہے بھڑکتے الاؤ کی آواز ؟

کبھی سنی ہے بھڑکتے الاؤ کی آواز ؟
اور اُس الاؤ میں "مجھ کو بچاؤ ” کی آواز

تمھارے ساتھ تعلق نہیں نبھا سکتا
تم ایک سنگ ، میں دل کے کٹاؤ کی آواز

پھر ایک دم مری شہ رگ میں ٹِیس اٹھنے لگی
کہ جب سنی تھی عدو کے پڑاؤ کی آواز

مرے حریف کی پوروں میں دفن ہوتی گئی
گلا دباتے، گلے کے دباؤ کی آواز

وہ ایک لاش سمندر سے جب نکالی گئی
تو آئی لاش کے کانوں سے ناؤ کی آواز

جلے مکاں کو مرمت کیا گیا ہے مگر
ابھی بھی آتی ہے گھر سے ” بچاؤ ” کی آواز

احمد آشنا

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے