کافر بنوں گا کُفر کا ساماں تو کیجئے

کافر بنوں گا کُفر کا ساماں تو کیجئے
پہلے گھنیری زُلف پریشاں تو کیجئے
اس نازِ ہوش کو کہ ہے موسیٰ پہ طعنہ زن
اک دن نقاب اُلٹ کے پشیماں تو کیجئے
عُشّاق بندگانِ خُدا ہیں خُدا نہیں
تھوڑا سا نرخِ حُسن کو ارزاں تو کیجئے
قدرت کو خود ہے حُسن کے الفاظ کا لحاظ
ایفا بھی ہو ہی جائے گا پیماں تو کیجئے
تا چند رسمِ جامہ دری کی حکایتیں
تکلیفِ یک تبسُّمِ پنہاں تو کیجئے
یُوں سر نہ ہوگی جوش کبھی عشق کی مہم
دل کو خرد سے دست و گریباں تو کیجئے

جوش ملیح آبادی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے