Jo Dill Qareeb Ho Pehly

جو دل قریب ہو پہلے نشانہ بنتا ہے

سو اس کا تیر مجھی پر چلانا بنتا ہے

یہ بوڑھی ماں کی طرح کچھ بھی کہہ نہیں سکتی

سو اس زمیں کا تمسخر اڑانا بنتا ہے

وہ گوری چھاؤں میں ہیں اور سیاہ دھوپ میں ہم

سو ان کا حق ہے ، انہی کا جلانا بنتا ہے

چراغ زاد ! چراغوں سے تیری بنتی نہیں

ہواؤں سے ہی ترا دوستانہ بنتا ہے

خرد کے آڑھتیوں کو یہ علم ہی تو نہیں

کہ خوب سوچ سمجھ کر دوانہ بنتا ہے

میں ہاتھ جوڑتا ہوں ناصحانِ شعلہ زباں

بہت دکھوں سے کوئی آشیانہ بنتا ہے

سعود عثمانی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے