جب سے ادراک و ہُنر کا مجھ پہ در وا ہو گیا

جب سے ادراک و ہُنر کا مجھ پہ در وا ہو گیا
زندگی کا اور بھی کچھ راز افشا ہو گیا
بجھ گئے ہیں شام ہی سے میری آنکھوں کے دئیے
شام ہی سے ہر طرف گہرا اندھیرا ہو گیا
میرے دل سے مٹ گیا ہے نام بھی اب تو ترا
اب تری چاہت کا قصّہ بھی پُرانا ہو گیا
چل رہی ہے پھر ہوائے ہجر میرے ساتھ ساتھ
دیکھتے ہی دیکھتے دل میرا صحرا ہو گیا
پیار کے دو بول میری جھولی میں وہ ڈال کر
کیا سمجھتے ہیں ادا حق چاہتوں کا ہو گیا؟
ناہید ورک

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے