Jab Kabhi Hum Tere Koochay

جب کبھی ہم ترے کوچے سے گزر جاتے ہیں

لوحِ ادراک پہ کچھ اور اُبھر جاتے ہیں

حُسن سے لیجئے تنطیم دو عالم کا سبق

صبح ہوتی ہے تو گیسو بھی سنور جاتے ہیں

ہم نے پایا ہےمحبت کا خمارِ ابدی

کیسے ہوتے ہیں وہ نشے کہ اُتر جاتے ہیں

اتنے خائف ہیں مے و مل سے جنابِ واعظ

نام کوثر بھی جو سنتے ہیں تو ڈر جاتے ہیں

مے کدہ بند ، مقفل ہیں در دیر و حَرم

دیکھنا ہے کہ شکیل آج کدھر جاتے ہیں

شکیلؔ بدایونی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے