Jab Bhi Yeh Dil

جب بھی یہ دِل اُداس ہوتا ہے

جانے کون آس پاس ہوتا ہے

گو برستی نہیں سدا آنکھیں!

اَبر تو بارہ ماس ہوتا ہے

چھال پیڑوں کی سخت ہے لیکن

نیچے ناخن کے ماس ہوتا ہے

آنکھیں پہچانتی ہیں آنکھوں کو

دَرد چہرہ شناس ہوتا ہے

زخم، کہتے ہیں دِل کا گہنا ہے

دَرد دِل کا لباس ہوتا ہے

ڈس ہی لیتا ہے سب کو عشق کبھی

سانپ موقع شناس ہوتا ہے

صرف اتنا کرم کیا کیجئے

آپ کو جتنا راس ہوتا ہے

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے