جاں بلب ہوں آ مری جاں الغیاث

(ردیف ثائے مثلثہ)
جاں بلب ہوں آ مری جاں الغیاث
ہوتے ہیں کچھ اور ساماں الغیاث
درد مندوں کو دوا ملتی نہیں
اے دوائے درد منداں الغیاث
جاں سے جاتے ہیں بے چارے غریب
چارہ فرمائے غریباں الغیاث
حَد سے گزریں درد کی بے دردیاں
درد سے بے حد ہوں نالاں الغیاث
بے قراری چین لیتی ہی نہیں
اَے قرارِ بے قراراں الغیاث
حسرتیں دل میں بہت بے چین ہیں
گھر ہوا جاتا ہے زنداں الغیاث
خاک ہے پامال میری کُو بہ کُو
اے ہوائے کوئے جاناں الغیاث
المدد اے زُلفِ سرور المدد
ہوں بلاؤں میں پریشاں الغیاث
دلِ کی اُلجھن دُور کر گیسوئے پاک
اے کرم کے سنبلستان الغیاث
اے سرِ پُر نور اے سرِ خدا
ہوں سراسیمہ پریشاں الغیاث
غمزدوں کی شام ہے تاریک رات
اے جبیں اے ماہِ تاباں الغیاث
اَبروئے شہ کاٹ دے زنجیرِ غم
تیرے صدقے تیرے قرباں الغیاث
دل کے ہر پہلو میں غم کی پھانس ہے
میں فدا مژگانِ جاناں الغیاث
چشمِ رحمت آ گیا آنکھوں میں دم
دیکھ حالِ خستہ حالاں الغیاث
مردمک اے مہر نورِ ذاتِ بحت
ہیں سیہ بختی کے ساماں الغیاث
تیر غم کے دل میں چھد کر رہ گئے
اے نگاہِ مہر جاناں الغیاث
اے کرم کی کان اے گوشِ حضور
سُن لے فریادِ غریباں الغیاث
عَارضِ رنگیں خزاں کو دُور کر
اے جناں آرا گلستاں الغیاث
بینی پُر نور حالِ ما بہ بیں
ناک میں دم ہے مری جاں الغیاث
جاں بلب ہوں جاں بلب پر رحم کر
اے لب اے عیسائے دوراں الغیاث
اے تبسم غنچہ ہائے دل کی جاں
کھل چلیں مُرجھائی کلیاں الغیاث
اے دہن اے چشمۂ آبِ حیات
مر مٹے دے آبِ حیواں الغیاث
دُرِّ مقصد کے لیے ہوں غرقِ غم
گوہرِ شادابِ دنداں الغیاث
اے زبانِ پاک کچھ کہہ دے کہ ہو
رد بلائے بے زباناں الغیاث
اے کلام اے راحتِ جانِ کلیم
کلمہ گو ہے غم سے نالاں الغیاث
کامِ شہ اے کام بخشِ کامِ دل
ہوں میں ناکامی سے گریاں الغیاث
چاہِ غم میں ہوں گرفتارِ اَلم
چاہِ یوسف اے زنخداں الغیاث
ریشِ اطہر سنبلِ گلزارِ خلد
ریشِ غم سے ہوں پریشاں الغیاث
اے گلو ئے صبح جنت شمع نور
تیِرہ ہے شامِ غریباں الغیاث
غم سے ہوں ہمدوش اے دوش المدد
دوش پر ہے بارِ عصیاں الغیاث
اے بغل اے صبحِ کافورِ بہشت
مہر بر شام غریباں الغیاث
غنچۂ گل عطر دانِ عطر خلد
بوئے غم سے ہوں پریشاں الغیاث
بازوئے شہ دست گیری کر مری
اے توانِ ناتواناں الغیاث
دستِ اقدس اے مرے نیسانِ جود
غم کے ہاتھوں سے ہوں گریاں الغیاث
اے کفِ دست اے یدِ بیضا کی جاں
تیرہ دل ہوں نور افشاں الغیاث
ہم سیہ ناموں کو اے تحریر دست
تو ہو دستاویز غفراں الغیاث
پھر بہائیں اُنگلیاں اَنہارِ فیض
پیاس سے ہونٹوں پہ ہے جاں الغیاث
بہرِ حق اے ناخن اے عقدہ کشا
مشکلیں ہو جائیں آساں الغیاث
سینۂ پُر نور صدقہ نور کا
بے ضیا سینہ ہے ویراں الغیاث
قلبِ انور تجھ کو سب کی فکر ہے
کر دے بے فکری کے ساماں الغیاث
اے جگر تجھ کو غلاموں کا ہے درد
میرے دُکھ کا بھی ہو درماں الغیاث
اے شکم بھر پیٹ صدقہ نور کا
پیٹ بھر اے کانِ احساں الغیاث
پشتِ والا میری پُشتی پر ہو تو
رُوبرو ہیں غم کے ساماں الغیاث
تیرے صدقے اے کمر بستہ کمر
ٹوٹی کمروں کا ہو درماں الغیاث
مُہر پشتِ پاک میں تجھ پر فدا
دے دے آزادی کا فرماں الغیاث
پائے انور اے سَرفرازی کی جاں
میں شکستہ پا ہوں جاناں الغیاث
نقشِ پا اے نو گل گلزارِ خلد
ہو یہ اُجڑا بَن گلستاں الغیاث
اے سراپا اے سراپا لطفِ حق
ہوں سراپا جرم و عصیاں الغیاث
اے عمامہ دَورِ گردش دُور کر
گرِد پھر پھر کر ہوں قرباں الغیاث
نیچے نیچے دامنوں والی عبا
خوار ہے خاکِ غریباں الغیاث
پڑ گئی شامِ اَلم میرے گلے
جلوۂ صبحِ گریباں الغیاث
کھول مشکل کی گرہ بندِ قبا
بندِ غم میں ہوں پریشاں الغیاث
آستیں نقدِ عطا در آستیں
بے نوا ہیں اَشک ریزاں الغیاث
چاک اے چاکِ جگر کے بخیہ کر
دل ہے غم سے چاک جاناں الغیاث
عیب کھلتے ہیں گدا کے روزِ حشر
دامنِ سلطانِ خوباں الغیاث
دور دامن دور دورہ ہے تیرا
دُور کر دُوری کا دوراں الغیاث
ہوں فسردہ خاطر اے گلگوں قبا
دل کھلا دیں تیری کلیاں الغیاث
دل ہے ٹکڑے ٹکڑے پیوندِ لباس
اے پناہِ خستہ حالاں الغیاث
ہے پھٹے حالوں مرا رختِ عمل
اے لباسِ پاک جاناں الغیاث
نعل شہ عزت ہے میری تیرے ہاتھ
اے وقارِ تاجِ شاہاں الغیاث
اے شراکِ نعلِ پاکِ مصطفیٰ
زیرِ نشتر ہے رگِ جاں الغیاث
شانۂ شہ دل ہے غم سے چاک چاک
اے انیسِ سینہ چاکاں الغیاث
سُرمہ اے چشم و چراغِ کوہِ طور
ہے سیہ شام غریباں الغیاث
ٹوٹتا ہے دم میں ڈورا سانس کا
ریشۂ مسواکِ جاناں الغیاث
آئینہ اے منزلِ انوارِ قدس
تیرہ بختی سے ہوں حیراں الغیاث
سخت دشمن ہے حسنؔ کی تاک میں
المدد محبوبِ یزداں الغیاث
حسن رضا بریلوی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے