اس سے پہلے کہ زمیں زاد شرارت کر جائیں

اس سے پہلے کہ زمیں زاد شرارت کر جائیں
ہم ستاروں نے یہ سوچا ہے کہ ہجرت کر جائیں
دولت خواب ہمارے جو کسی کام نہ آئی
اب کسی کو نہیں ملنے کی وصیت کر جائیں
دہر سے ہم یوں ہی بیکار چلے جاتے تھے
پھر یہ سوچا کہ چلو ایک محبت کر جائیں
اک ذرا وقت میسر ہو تو آ کر مرے دوست
دل میں کھلتے ہوئے پھولوں کو نصیحت کر جائیں
ان ہوا خواہوں سے کہنا کہ ذرا شام ڈھلے
آئیں اور بزم چراغاں کی صدارت کر جائیں
دل کی اک ایک خرابی کا سبب جانتے ہیں
پھر بھی ممکن ہے کہ ہم تم سے مروت کر جائیں
شہر کے بعد تو صحرا تھا میاں خیر ہوئی
دشت کے پار بھلا کیا ہے کہ وحشت کر جائیں
ریگ دل میں کئی نادیدہ پرندے بھی ہیں دفن
سوچتے ہوں گے کہ دریا کی زیارت کر جائیں
ادریس بابر

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے