Is Mein Koi Fraib

اس میں کوئی فریب تو اے آسماں نہیں

بجلی وہاں گری ہے جہاں آشیاں نہیں

صیاد میں اسیر کہوں کس سے حالِ دل

صرف ایک تو ہے وہ بھی مرا ہم زباں نہیں

تم نے دیا ہماری وفاؤں کا کیا جواب

یہ ہم وہاں بتائیں گے تم کو یہاں نہیں

سجدے جو بت کدے میں کیے میری کیا خطا

تم نے کبھی کہا یہ مرا آستاں نہیں؟

گم کردہ راہ کی کہیں مٹی نہ ہو خراب

گرد اس طرف اڑی ہے جدھر کارواں نہیں

کیوں شمع انتظار بجھاتے ہو اے قمرؔ

نالے ہیں یہ کسی کے سحر کی اذاں نہیں

قمر جلال آبادی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے