Honsla Chor Gai Rahguzar Akhir Car

حوصلہ چھوڑ گئی راہ گزر آخر کار

رہ گیا ساتھ مسافر کے سفر آخر کار

کوہِ اسود نے بہت راستے روکے لیکن

شرق سے پھوٹ پڑا چشمۂ زر آخر کار

اس کے پتوں پہ لکیریں تھیں ہتھیلی جیسی

مدتوں سبز رہا پیڑ مگر آخر کار

تھم کے رہ جائے گی اک روز لہو کی گردش

ختم ہو جائے گا اندر بھی سفر آخر کار

جس نے اک عمر سے آواز جھلس رکھی تھی

آنکھ تک آ گیا وہ شعلۂ تر آخر کار

زرد ہو جائیں گے پتے بھی گلابوں کی طرح

ایک ہو جائیں گے سب عیب و ہنر آخر کار

دست خوش لمس میسر نہیں آئے گا کبھی

بند رہ جائے گا سیپی میں گہر آخر کار

تم نہیں جانتے اس رنج کو ہم جانتے ہیں

راکھ کر جائے گا اس غم کا اثر آخر کار

ٹوٹ جاتا ہے کسی شخص کے مانند سعود

قیدِ تنہائی میں رہتا ہوا گھر آخر کار

سعود عثمانی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے