ہجر موجود ہے فسانے میں

ہجر موجود ہے فسانے میں

سانپ ہوتا ہے ہر خزانے میں

رات بکھری ہوئی تھی بستر پر

کٹ گئی سلوٹیں اٹھانے میں

رزق نے گھر سنبھال رکھا ہے

عشق رکھا ہے سرد خانے میں

رات بھی ہو گئی ہے دن جیسی

گھر جلانے کے شاخسانے میں

روز آسیب آتے جاتے ہیں

ایسا کیا ہے غریب خانے میں

ہو رہی ہے ملازمت فیصل

رائگانی کے کارخانے میں

فیصل عجمی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے