Hai Dard Siwaa Es Aan Mera

ہے درد سِوا اِس آن میرا

تھمتا ہی نہیں بیان میرا

کس شیش محل میں بُجھ گیا ہے

جلتا ہوا شمع دان میرا

اِس راہ پہ بھٹک رہا ہوں کب سے

اور سامنے ہے مکان میرا

مُنصف نے ابھی سُنا نہیں ہے

اور ختم ہوا بیان میرا

میں ضبط بہت کیا ہوں صاحب

مت پوچھیو امتحان میرا

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے