Hai Aik Sale Nadamat

نمِ شب
ہے ایک سیلِ ندامت اس آبگینے میں

عجیب ہے یہ سمندر کہ ہے سفینے میں

اسی زمیں اسی مٹی سے نور پھوٹا تھا

اسی دیار ، اسی رُت ، اسی مہینے میں

ہے بند آنکھ میں بھی عکسِ مسجدِ نبوی

جڑا ہوا ہے یہی خواب اس نگینے میں

کسی نے اسمِ محمد پڑھا تو ایسا لگا

کہ جیسے کوئی پرندہ اُڑا ہو سینے میں

میں ایک بے ادب و کم شناس اعرابی

سلگتے دشت سے آیا ہوا مدینے میں

مہِ حجاز کھلے آسماں میں ہے اور میں

بھٹک رہا ہوں کسی بے چراغ زینے میں

پلٹ کے آیا نہیں جنت البقیع سے میں

گڑا ہوا ہے مرا دل اسی دفینے میں

کسی حدیث کی خوشبو مجھے بتاتی ہے

مہک گلاب کی تھی آپ کے پسینے میں

سعود یوں بھی تو ممکن ہے حاضری لگ جائے

میں اپنے شہر میں ہوں اور دل مدینے میں

٭٭٭

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے