فراز کے نام ایک خط۔ ۔ ۔ اگست2005

فراز تجھ پہ نچھاور ہیں اہلِ دیدہ و دل
تو ایک جاں ہے مگر قافلے کی صورت ہے
فراز تجھ سے ہراساں ہیں اہلِ حرص و ہوس
کہ حرف حرف ترا آئینے کی صورت ہے
ترا فراز مدح خوانِ دست بستہ کو
کسی سند کسی دربار سے نہیں ملنا
ترا فراز کسی ’’بارہویں کھلاڑی‘‘ کو
جنونِ خلعت و دستار سے نہیں ملنا
ترا فراز کسی دستۂ سبک سر کو
فروغِ حلقۂ خونخوار سے نہیں ملنا
ترا فراز کسی خود سِتاں محاسب کو
فریبِ گردشِ بازار سے نہیں ملنا
فراز تجھ پہ نچھاور ہیں اہل دیدہ و دل
سعید خان

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے