ایک رشتے کو نبھانے کے لیے

ایک رشتے کو نبھانے کے لیے
خون دیتا ہوں جلانے کے لیے
اشک آنکھوں میں سجا لایاہوں
دشت کی پیاس بجھانے کے لیے
پھر کسی غم کا سہارا لیا ہے
اشک پلکوں پہ اٹھانے کے لیے
کتنے رشتوں کو کچل آیا میں
تیرے معیار تک آنے کے لیے
اُس نے پھر مجھ سے لہو مانگا ہے
دُھول کو پھول بنانے کے لیے
شاذ اب رنگ کہاں سے لاءوں
تیری تصویر بنانے کے لیے
شجاع شاذ

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے