Duniya Ki Raviaat Se

دنیا کی راویات سے بیگانہ نہیں ہوں

چھیڑو نہ مجھے میں کوئی دیوانہ نہیں ہوں

اس کثرتِ غم پر بھی مجھے حسرتِ غم ہے

جو بھر کے چھلک جائے وہ پیمانہ نہیں ہوں

رو دادِ غم عشق ہےتازہ مرے دم سے

عنوان ہر فسانہ ہوں ، افسانہ نہیں ہوں

الزام ِ جنون دیں نہ مجھے اہلِ محبت

میں خود یہ سمجھتا ہوں کہ دیوانہ نہیں ہوں

وہ قائل خوداری اُلفت سہی لیکن

آدابِ محبت سے بیگانہ نہیں ہوں

ہے برقِ سرِ طور سے دل شعلہ بداماں

شمع سر محفل ہوں میں پروانہ نہیں ہوں

ہے گردشِ ساغر مری تقدیرکا چکر

محتاج طواف درمے خانہ نہیں ہوں

کانٹوں سے گزر جاتا ہوں دامن بچا کر

پھولوں کی سیاست سے میں بیگانہ نہیں ہوں

لزت کشِ نظارہ شکیل اپنی نظر سے

محرومِ جمال رُخ جانا نہ نہیں ہوں

شکیلؔ بدایونی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے