Dil Ny Aik Aik Dukh

دل نے ایک ایک دکھ سہا، تنہا
انجمن انجمن رہا ۔۔۔۔۔۔۔ تنہا

ڈھلتے سایوں میں، تیرے کوچے سے
کوئی گزرا ہے بارہا ۔۔۔۔۔۔۔۔تنہا

تیری آہٹ قدم قدم ۔۔۔۔ اور میں!
اس معیٓت میں بھی رہا ۔۔۔۔۔۔تنہا

کہنہ یادوں کے برف زاروں سے
ایک آنسو بہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ بہا، تنہا

ڈوبتے ساحلوں کے موڑ پہ دل ۔۔۔
اک کھنڈر سا ۔۔۔ رہا سہا ۔۔۔۔ تنہا

گونجتا رہ گیا ۔۔۔۔۔ خلاؤں میں
وقت کا ایک قہقہہ ۔۔۔۔۔۔۔ تنہا​

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے