Dewaar Py Rakha Hoa

دیوار پہ رکھا ہوا مٹی کا دیا میں

سب کچھ کہا اور رات سے کچھ بھی نہ کہا میں

کچھ اور بھی مسکن تھے ترے دل کے علاوہ

لگتا ہے کہیں اور بھی مسمار ہوا میں

اِس دکھ کو تو میں ٹھیک بتا بھی نہیں پاتا

میں خود کو میسّر تھا مگر مِل نہ سکا میں

جاگا ہوں مگر خواب کی دہشت نہیں جاتی

کیا دیکھتا ہوں یار تجھے بھول گیا میں

سورج کے اُفق ہوتے ہیں ،منزل نہیں ہوتی

سو ڈھلتا رہا ، جلتا رہا ، چلتا رہا میں

اک عشق قبیلہ مری مٹّی میں چھپا تھا

اک شخص تھا لیکن کوئی اک شخص نہ تھا میں

اک گھونٹ کی وقعت مرے پندار سے کم تھی

اس بات سے واقف مرا مشکیزہ ہے یا میں

اک جسم میں رہتے ہوئے ہم دور بہت تھے

آنکھیں نہ کھلیں مجھ پہ، نہ آنکھوں پہ کھلا میں

کچھ اور بھی درکار تھا سب کچھ کے علاوہ

کیا ہو گا جسے ڈھونڈتا تھا تیرے سوا میں

٭٭٭

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے