درد ہوتے ہیں کئی دل میں چھپانے کے لئے

درد ہوتے ہیں کئی دل میں چھپانے کے لئے
سب کے سب آنسو نہیں* ہوتے بہانے کے لئے
عمر تنہا کاٹ دی وعدہ نِبھانے کے لئے
عہد باندھا تھا کسی نے آزمانے کے لئے
یہ قفس ہے گھر کی زیبائش بڑھانے کے لئے
یہ پرندے تو نہیں ہیں آشیانے کے لئے
کچھ دیئے دیوار پر رکھنے ہیں وقتِ انتظار
کچھ دیئے لایا ہوں پلکوں پر جلانے کے لئے
وہ بظاہر تو ملا تھا ایک لمحے بھر کو عدیم
عمر چاہیئے اس کو بھُلانے کے لئے
لوگ زیرِ خاک بھی تو ڈوب جاتے ہیں عدیم
اک سمندر ہی نہیں ہے ڈوب جانے کے لئے
تو پسِ خندہ لبی آہوں کی آوازیں تو سن
یہ ہنسی تو آئی ہے آنسو چھپانے کے لئے
کوئی غم ہو کوئی دکھ ہو درد کوئی ہو عدیم
مسکرانا پڑ ہی جاتا ہے زمانے کے لئے
عدیم ہاشمی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے