Chasham E Be Khawab Py

چشمِ بے خواب پہ خوابوں کا اثر لگتا ہے

کیسا پت جھڑ ہے کہ شاخوں پہ ثمر لگتا ہے

مہلتِ عمر بس اتنی تھی کہ گزرا ہوا وقت

اک ڈھلکتے ہوئے آنسو کا سفر لگتا ہے

کہیں کچھ اور بھی ہو جاؤں نہ ریزہ ریزہ

ایسا ٹوٹا ہوں کہ جڑتے ہوئے ڈر لگتا ہے

لوگ چکرائے ہوئے پھرتے ہیں گھر سے گھر تک

دور سے دیکھو تو یہ شہر بھنور لگتا ہے

وقت نظریں بھی پلٹ جاتا ہے اقدار کے ساتھ

دن بدلتے ہیں تو ہر عیب ہنر لگتا ہے

کوئی شوریدہ نفس جسم کے اندر ہے سعود

دل دھڑکتا ہے کہ دیوار سے سر لگتا ہے

سعود عثمانی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے