فروری 5, 2023
wali ullah wali
غزل بقلم محمد ولی اللّٰہ ولی

بہت کی ہے میں نے بھی بخت آزمائی
مگر راس آئی تو مجھ کو گدائی

میاں جاؤ رہنے بھی دو پارسائی
کہاں کے بڑے اور کہاں کی بڑائی

محبت سے جب آشنائی نہیں ہے
تو کس کام کی یہ پڑھائی لکھائی

جو تیری اسارت کا لُطف آشنا ہے
بھلا کیوں کرے وہ دعائے رہائی

مرے مُدّعی نے بہت زور مارا
مگر بے گناہی مِرے کام آئی

جبینِ محبت کی تقدیر بدلے
ترے آستاں تک اگر ہو رسائی

ولیؔ داغِ دل آپ کہتے ہیں جس کو
وہی ہے مِری عمر بھر کی کمائی

ولی اللّٰہ ولی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے