Bhoola Howa Afsana

بُھولا ہُوا افسانہ

دُنیا مجھے کہتی ہے اللہ کا دیوانہ
صُورت ہے فقیرانہ انداز ہیں شاہانہ

آمادۂ کج بحثی عاشق بھی ہے ناصح بھی
اک عشق کا سودائی اک عقل کا دیوانہ

توحید پہ ناز ایسا ، دل محوِ ایاز ایسا
توڑا نہ گیا تجھ سے محمود یہ بُت خانہ

زندان کی دیواریں ، ہیں مانع آزادی
ہاں اے سرِ شوریدہ! ہاں ہمتِ مردانہ

ایمان شکن آنکھیں دل میں ہیں ، دل آنکھوں میں
بُت خانے میں کعبہ ہے ، کعبے میں ہے بُت خانہ

جذبات بھڑکتے ہیں جلوؤں کی نمائش میں
ہے شمع سے وابستہ سوزِ دلِ پروانہ

اب میری خطاؤں پر کہہ دیتے ہیں وہ ہنس کر
سودائی ہے سودائی ، دیوانہ ہے دیوانہ

محشر کا تماشہ ہے اک نقل جوانی کی
گزرا ہُوا ہنگامہ ، بُھولا ہُوا افسانہ

بنتے تھے حفیظ ایسے ہم جان گئے ان کو
یہ طرزِ غزلخوانی ، یہ شیوۂ رندانہ

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے