Befaiz Shouq E Muhabat

بفیض ِ شوق محبت ترا فسانہ کُھلا
جنوں کے رنگ سے مجنوں ترا گھرانہ کھلا

جسے بھی دیکھئے منظر اٹھائے پھرتا ہے
تمام عمر نہ مجھ پر مرا زمانہ کھلا

کہیں شمار نہیں رزق کا کسی کے پاس
فقط مجھی پہ قناعت سے آب و دانہ کھلا

سفر کی سمت کھلی ہے نہ بادبان کھلے
ہوا کا دیپ کی لو پر ہے تازیانہ کھلا

مجھے اندھیرے میں سائے دکھائی دیتے تھے
چراغ جلتے ہی مجھ پر نگار خانہ کھلا

میں راز تھا کوئی سو راز ہی رہا لودھی
مرا وجود مرے روبرو کھلا نہ کھلا

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے