Baras Gaya Be Khurabaat

برس گیا بہ خراباتِ آرزُو، تِرا غم
قدح قدح تِری یادیں سبُو سبُو، تِرا غم

تِرے خیال کے پہلو سے اٹھ کے جب دیکھا
مہک رہا تھا زمانے میں کُو بہ کُو، تِرا غم

غبارِ رنگ میں رس ڈھونڈتی کرن تِری دھن
گرفتِ سنگ میں بل کھاتی آبجُو، تِرا غم

ندی پہ چاند کا پرتو تِرا نشان قدم
خطِ سحر پہ اندھیروں کا رقص، تُو، تِرا غم

ہے جس کی رو میں شگوفے، وہ فصل، تیرا دھیان
ہے جس کے لمس میں ٹھنڈک، وہ گرم لُو، تِرا غم

نخیلِ زیست کی چھاﺅں میں نے بہ لب تِری یاد
فصیلِ دل کے کلس پر ستارہ جُو، ترا غم

طلوعِ مہر، شگفتِ سحر، سیاہئ شب
تری طلب، تجھے پانے کی آرزُو، تِرا غم

نگہ اٹھی تو زمانے کے سامنے، تِرا روپ
پلک جھکی تو مِرے دل کے رُو بہ رُو، تِرا غم

مجید امجد

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے