Baja Tark-E-Wafa

بجا ترکِ وفا کی کوششیں لیکن تعجب ہے

کہ بے جا زحمتیں کیونکرگوارا کر رہا ہوں میں

ہے اک حُسن عمل پنہاں درونِ پردۂ ہستی

کسے معلوم اس پردے میں کیا کیا کر رہا ہوں میں

نہ ہو یا رب کبھی تکمیل میرے اس ارادے کی

کہ اب ترکِ محبت کا ارادہ کر رہا ہوں میں

سرِ محشر مجھے شکوہ ہے اک جانِ تمنا سے

دلیلیں ہوش میں آئیں کہ دعویٰ کر رہا ہوں میں

نہ ساغر ہے نہ پیمانہ نہ ساقی ہے نہ میخانہ

شکیل اب چند اشکوں میں گزارا کر رہا ہوں میں

شکیلؔ بدایونی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے