بڑے تاجروں کی ستائی ہوئی

بڑے تاجروں کی ستائی ہوئی
یہ دنیا دلہن ہے جلائی ہوئی

بھری دوپہر کا کھلا پھول ہے
پسینے میں لڑکی نہائی ہوئی

کرن پھول کی پتیوں میں دبی
ہنسی اس کے ہونٹوں پہ آئی ہوئی

وہ چہرہ کتابی رہا سامنے
بڑی خوب صورت پڑھائی ہوئی

خوشی ہم غریبوں کی کیا ہے میاں
مزاروں پہ چادر چڑھائی ہوئی

اداسی بچھی ہے بڑی دور تک
بہاروں کی بیٹی پرائی ہوئی

بشیر بدر

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے