زمین بدلی ، نہ ہی آسماں بدلا

زمین بدلی ، نہ ہی آسماں بدلا
سورج بدلا نہ ہی ستارے چاند بدلے
نہ ہی شب وروز بدلے کاروان بھی نہیں بدلے
مگر ہاں مسافروں کے ہمسفر ۔۔۔۔۔
نومبر بدلا نہ دسمبر بدلا
نہ ہی گردشِ ایام بدلی
کہکشاں کی نہ جھلملاتی روشنی بھی وہی ہے
نہ ترا رنگ روپ بدلا
نہ ہی ترےمعمولاتِ نہ ہی زندگی کے اوقات
دل بدلا نہ دل چییرنے والے تیرے الفاظ
لہجہ بدلا نہ آنکھوں کا خمار
تیرے بدل جانے سے بدلا ہے تو۔۔۔۔۔
تو اے سنگدل دوست صرف اور صرف
میرے دل اور روح کا جہاں بدلا ہے …
تسلیم اکرام

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے