بازیافت

بازیافت

ہم جن خوابوں کے پیچھے بھاگتے ہیں

وہ آنکھ کھُلتے ہی ٹوٹ جاتے ہیں

ہم جن رستوں پر چلنا چاہتے ہیں

وہ رستے نہ جانے کیوں اجنبی بن جاتے ہیں

ہماری آنکھیں انتظار کرنا بھول چکی ہیں

ہمارے آنسو خشک ہوچکے ہیں

کسی کی یاد اب ہ میں ستاتی نہیں

اب نہ کوئی درد ہے

نہ کوئی خلش

ہم نے کاٹ پھینکے وہ اعضاء جو ہ میں لہو لہو کرچکے

ہاں ۔۔۔

اپنے آپ سے بچھڑنے کا کچھ ملال تو ہے

اپنے آپ پر ہنسنے کاتھوڑاغم بھی ہے

جو جھوٹ ہم نے اپنی ذات سے بولے

ان کی چبھن بھی ہے

مگر اس کے سوا ہم کیاکرتے

زندگی کوئی کوئی معانی تو دینا تھا

بِنا کسی سرشاری کے

کیونکہ ہم جانتے ہیں

ہمار ی محبت سڑ چکی ہے

انجلا ء ہمیش

اس پوسٹ کو شیئر کریں

One comment

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے