آئیے رو لیں کہیں رونے سے چین آ جائے گا

آئیے رو لیں کہیں رونے سے چین آ جائے گا
ورنہ درد دل بھری محفل میں پکڑا جائے گا
چاند کی چاہت ہے لیکن چاند کو کم دیکھیے
ورنہ جب آنکھوں میں بس جائے گا گہنا جائے گا
جنبش موج صبا سے بھی اگر لب ہل گئے
بات پکڑی جائے گی محشر اٹھایا جائے گا
سردیوں کی اوس میں ٹھٹھرا ہوا اک اجنبی
کل تری دیوار کے سائے میں پایا جائے گا
دید کی مہلت تو ملتی ہے مگر کیا دیکھیے
آنکھ بجھ جائے گی آخر پھول کمھلا جائے گا
اے صبا فرصت نہیں خاکستر دل سے نہ کھیل
ہم اگر روئے تو پھر تا دیر رویا جائے گا
خورشید رضوی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے