اسلوبِ بد دُعا نہ دُھائی کا رنگ ھے

اسلوبِ بد دُعا نہ دُھائی کا رنگ ھے
نالہ کشی میں شُعلہ نوائی کا رنگ ھے
منبر یہ کوئی اَور ھے خُطبہ ھے کوئی اور
قیدی کی گفتگو ھے رھائی کا رنگ ھے
شانِ خدا ھے قافلہ سالاریٔ دَمِشق
اک بندۂ خدا میں خدائی کا رنگ ھے
یونہی نہیں کِھلا یہ گلستانِ مُمکِنات
صحرائے کُن پہ آبلہ پائی کا رنگ ھے
آیاتِ اِبتلا ہیں طمانچوں کے یہ نشاں
رخسارِ نیل گوں پہ لکھائی کا رنگ ھے
گل ھائے سرخِ عشق ھیں، دھبّے انہیں نہ جان
ملبوسِ ماتمی پہ صفائی کا رنگ ھے
آتے ھیں آسماں سے مضامیں قطار میں
صف بندیٔ رِثا میں رَسائی کا رنگ ھے
بے آب کب ھے گوھرِ اشکِ غمِ عطَش
ھر دُرّ آب گوں پہ ترائی کا رنگ ھے
میں ھوں غلامِ بادشہِ امر و انکشاف
میرے سخن پہ فرماں روائی کا رنگ ھے
عارف امام

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے