آنکھ سے غم نہاں نہیں ہوتے

آنکھ سے غم نہاں نہیں ہوتے
پھر بھی آنسو رواں نہیں ہوتے
ہم کلام اُن سے ہیں تصوّر میں
اصل میں یہ سماں نہیں ہوتے
یوں تو کہنے کو ہم نہیں موجود
پر یہ سوچو کہاں نہیں ہوتے
عمر بھر کا ہے تیرا میرا ساتھ
اس قدر بدگماں نہیں ہوتے
پیار ہوتا ہے یا نہیں ہوتا
اس میں وہم و گماں نہیں ہوتے
ناہید ورک

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے