احوال

احوال

چپکے چپکے دل کے اندر
درد کا دریا بہتا ہے
موج موج میں اس دریا کی
کیسی نامانوس زباں میں
کوئی ہمدم ، کوئی ساتھی
دکھ کے قصے کہتا ہے
کبھی کبھی تو اس کی لہریں
بے قابو سی ہو کر مجھ سے
عجب سوال اُٹھاتی ہیں
چٹکی سی اِک لے کر دِل میں
نئی کسک دے جاتی ہیں

شازیہ اکبر

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے