Ae Qafla-E-Shoq

اے قافلۂ شوق مرے دِل سے گزر جا

منزل کی تمّنا لئے منزل سے گزر جا

پروردۂ طوفان ہے تو موجِ محّبت

ساحل بھی جو آجائے تو ساحل سے گزر جا

پھر دیکھ جو ہو کشمکشِ حُسن کا عالم

نیچی کئے نظروں کو مقابل سے گزر جا

دل ڈھونڈھ رہا ہے کوئی جاں سوز تجّلی

اے برقِ نظر سینۂ بسمل سے گزر جا

ہر گوشۂ ہستی ہے ابھی درخورِ تعمیر

اک بار پھر اُجڑی ہوئی بستی سے گزر جا

شکیلؔ بدایونی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے