اب کے آیا ایسا چیت

اب کے آیا ایسا چیت
دل کی صورت چپ ہیں کھیت
پھیلا دریا کا دامن
اوپر پانی نیچے ریت
راہوں کے سناٹے میں
ڈوب گیا دل درد سمیت
اس موسم کا نام ہے کیا
دل میں ساون منہ پر چیت
نام کو آنچ نہیں باقیؔ
دل ہے یا ندی کی ریت
باقی صدیقی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے