آزر رہا ہے تیشہ مرے خاندان میں

آزر رہا ہے تیشہ مرے خاندان میں
پیکر دکھائی دیتے ہیں مجھ کو چٹان میں
سب اپنے اپنے طاق میں تھرا کے رہ گئے
کچھ تو کہا ہوا نے چراغوں کے کان میں
میں اپنی جستجو میں یہاں تک پہنچ گیا
اب آئینہ ہی رہ گیا ہے درمیان میں
نکلی نہیں ہے دل سے مرے بد دعا کبھی
رکھے خدا عدو کو بھی اپنی امان میں
منظر بھٹک رہے تھے در و بام کے قریب
میں سو رہا تھا خواب کے پچھلے مکان میں
آزر اسی کو لوگ نہ کہتے ہوں آفتاب
اک داغ سا چمکتا ہے جو آسمان میں
دلاور علی آزر

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے