آپ سے انس ہوا چاہتا ہے

آپ سے انس ہوا چاہتا ہے
پھر کوئی باب کھلا چاہتا ہے
میرے احباب میں کر دو یہ خبر
وہ بھی اب میرا ہوا چاہتا ہے
عقل ہی کو نہیں ندرت مرغوب
دل بھی انداز نیا چاہتا ہے
ہم نئی دوستی کے قائل تھے
کوئی دشمن کا پتہ چاہتا ہے
جو کھٹکتا ہے ایک عالمؔ کو
وہ بھی لوگوں کی دعا چاہتا ہے
افروز عالم

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے