UrduGallery

Zaruri To Nahi

66 views

0   0

I would like to share with you a very beautiful, piece of classic urdu poetry from Khamosh Dehlavi. I hope you will enjoy it. SUBSCRIBE My Channel For More Videos: www.youtube.com/gulzar5h Follow me on Twitter ::::: twitter.com/gulzar5h Transcript of Ghazal in Roman Urdu -------------------- Ummr jalwon main basar ho yeh zaruri to nahi Har shab-e-ghum ki sehar ho yeh zaruri to nahi Chashm-e-saqi se piyo ya lab-e-saagar se piyo Bekhudi aathoN pehar ho yeh zaruri to nahi Nind to dard ke bistar pe bhi aajati hai Un ki aaghosh maiN hi sar ho yeh zaruri to nahi Shekh karta to hai masjid main khuda ko sajde Us ke sajdoN maiN asar ho yeh zaruri to nahi Sab ki nazron me ho saaqi yeh zaruri hai magar Sab pe saaqi ki nazar ho yeh zaruri to nahi "اردو شاعری کا متن" ----------------------------------- عمر جلووں میں بسر ہو یہ ضروری تو نہیں ہر شبِ غم کی سحر ہو ضروری تو نہیں چشمِ ساقی سے پیو یا لبِ ساغر سے پیو بے خودی آٹھوں پہر ہو یہ ضروری تو نہیں نیند تو درد کے بستر پہ بھی آ سکتی ہے اُن کی آغوش میں سر ہو یہ ضروری تو نہیں شیخ کرتا تو ہے مسجد میں خدا کو سجدے اُس کے سجدوں میں اثر ہو یہ ضروری تو نہیں سب کی نظروں میں ہو ساقی یہ ضروری ہے مگر سب پہ ساقی کی نظر ہو یہ ضروری تو نہیں


View More
Comments